کچھ تو بولو کہ شبِ درد گزاری کیسے

احمد فرازؔ

   اتنے چُپ کیوں ہو رفیقانِ سفر کچھ تو کہو

درد سے چُور ہوئے ہو کہ قرار آیا ہے

بھر گیا ہجر کا ہر زخم کہ جی ہار چلے

بجھ گیا شوق کہ پیغامِ نگار آیا ہے

نامرادی کی تھکن ہے کہ خمارِ شبِ وصل

جاں سلگتی ہے کہ چہروں پہ نکھار آیا ہے

کتنی اُجڑی ہوئی رت ہے کہ سکوں ہے نہ جنوں

اتنی بے فیض ہوئی بادِ بہاری کیسے

نہ کہیں نوحۂ جاں ہے نہ کہیں نغمۂ دل

کچھ تو بولو کہ شبِ درد گزاری کیسے

سر بہ زانو ہو تو کیوں چاک گریباں والو

بازی راہِ طلب جیت کے ہاری کیسے

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *