خاتم الانبیاءؐ

(ثاقب زیروی)

تُو حبیب ربّ کریم ہے تُو عجیب دُرِّیتیم ہے

تیرے وصف کیسے بیاں کروں تُو جہاں میں سب سے عظیم ہے

تُو وجودِ حق کی دلیل ہے تُو دعائے قلبِ خلیل ہے

تیری ذات خاتَمِ انبیاء تیرا نُور سب سے قدیم ہے

تُو جمالِ حق کا ہے آئینہ تُو حریمِ راز کا آشنا

تُو کلی کلی کی ہے آرزو تُو چمن چَمن کی نسیم ہے

مِری شاعری کا ظہور تُو میرے علم و فن کا شعور تُو

تیری آرزو مِری زندگی تُو ہی میری عقلِ سلیم ہے

تُو نے بےکسوں کو دوائیں دیں تُو نے دشمنوں کو دعائیں دیں

تُو کرم کا ایک سحاب ہے۔ تیرا خُلق خلق عظیم ہے

تیری بات بات ہے معتبر‘ تیرا ہاتھ نبضِ حیات پر

تُو ہر ایک جان کا طبیب ہے تُو ہر ایک دل کا حکیم ہے

تُو نظر سے کتنا ہی دُور ہو‘ میرے قلب سے ہے قریب تر

تیرا ذکر مرہمِ قلب و جاں‘ تیری یاد بوئے شمیم ہے

نہیں فِکر ثاقبِ بے نوا‘ جو کہے زمانہ بُرا بَھلا

تُو اُسی کا ہے تُو اُسی کا تھا وہ جو رحمتوں کا قسیم ہے

                                      (تجربات جو ہیں امانت حیات کی)

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *