رُوپے کی تاریخ

یکم جنوری 1961ء سے قبل پاکستانی روپے کی ترتیب یُوں تھی:

پُھوٹی کوڑی  <کوڑی  <دَمڑی  < پائی  < دھیلا  < پیسہ  <   ٹَکا  < آنہ  <  رُوپیہ

3 پُھوٹی کوڑی      =          1 کُوڑی

10 کُوڑی =          1 دَمڑی

2 دَمڑی  =          1 پائی

2/11 پائی           =          1 دھیلا

2 دھیلے =          1 پیسہ

2 پیسے              =          1 ٹکا

2 ٹَکے               =          1 آنہ

16 آنے   =          1 رُوپیہ

رُوپیہ بےچارہ جو آج بےحال ہوچکا ہے، کبھی اس ایک رُوپے میں 16 آنے، 32 ٹکے، 64 پیسے، 128 دھیلے، 192 پائیاں، 264 دمڑیاں، 2640 کوڑیاں اور 7920 پُھوٹی کوڑیاں ہوتی تھیں۔ پُھوٹی کوڑی مغل دورِ حکومت کی ایک کرنسی تھی جس کی قدر کم ترین تھی۔ اُردو زبان کے روزمرہ میں ’’پُھوٹی کوڑی‘‘ کو محاورۃً محتاجی کی علامت کے طور پر بھی استعمال کیا جاتا ہے، مثلاً: ’’میرے پاس پُھوٹی کوڑی تک نہیں بچی!‘‘

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *