ميری   نُورِ    نظر    ميری   جانِ   جِگَر

طاہرہ زرتشت نَاز

تيرے آنچل ميں تاروں  کی جِھلمِل  سجے

تيری  زُلفوں ميں کليوں کی خوشبُو  بسے

تيرے  ماتھے  پہ اُلفت  کا  جُھومر  سجے

دِل  ميں ہَمدم  کے تيری  ہی  چاھت بَسے

ميری   نُورِ    نظر   ميری     جانِ   جِگر

تيری  خُوشيوں  کو  ميری   لگے  نہ  نظر

تیرے  گُلشن  کی   ہر   ڈال   پُھولے  پھلے

تُجھ  کو  دنيا  ميں  جنَّت  کی نعمت  ملے

غم  کوئی   پاس  تيرے  نہ  پھٹکے  کبھی

کانٹا  دامن  ميں  تيرے  نہ   آٹکے  کبھی

دِل   ميں   قائم   ہميشہ   صداقت     رہے

تُجھ   کو  حاصل  خدا  کی   رفاقت   رہے

آس  دِل   کی   تمہارے  نہ   ٹوٹے   کبھی

ہاتھ  سے اُس کا  دامن  نہ  چھوٹے کبھی

دِل  ميں  اُس  کی  خشيَّت   ہميشہ   رہے

اُس   سے  چاہت  ، محبّت  ہميشہ    رہے

ہونا   مايُوس   مومن    کا   شيوہ    نہيں

بِن   دعا    کے   مِلا  کوئی   ميوہ    نہيں

بے بسوں کا  وہ  ہوتا  ہے  خود  ہِی  کفيل

جس  کا کوئی  نہ ہو اُس کا  وہ  ہے وکيل

خود  يہ   قراں ميں  کہتا  ہے  مَولا   کريم

اُس کی شانِ  کريمی ہے سب  سے عظيم

مُجھ  کو  بندہ   ميرا  جب   بُلائے   کوئی

دَر  پہ  آئے   تو   خالی   نہ  جائے کوئی

کوئی  بندہ  جو  تقوٰی  سے  ہووے  قريب

بڑھ کے آتا ہوں ميں! کہہ کے” اِنّیِ قَريب”

تجھ کو خوشيوں کی  برسات   دائم  مِلے

اُس  کے  فضلوں  کی سوغات  دائم  مِلے

نَاز  کی  سب   دعاؤں    کو    مَولا   سنے

بگڑی سب  کی اُسی   کے  کرم  سے  بنے

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *