شہرِ وَفا ميں  پياروں ، دُلاروں کي خير ہو

 

طاہرہ زرتشت ناز

شہرِ وَفا ميں پياروں دُلاروں کي خير ہو

جو شب ميں ضوفشاں ہيں ، ستاروں کي خير ہو

 

جيسے کے شمعّ  نُور کے ہالے لئے ہوئے

يُونہي اندھيري شب ميں اُجالوں کي خير ہو

 

جاں سوختہ ہے اور مِرا گھُٹنے لگا ہے دم

يارب !تيرے حبيب کے پالوں کي خير ہو

 

سينہ  سِپر ہيں تيري ہي توحيد کے لئے

نُورِ وَفا کے  پُتلوں ،  جيالوں کي خير ہو

 

اَلله  نِگہبان ہو ، فرشتے ہوں ہم رِکاب

دينِ متيں کے شاہ سواروں کي خير ہو

 

منظر عياں ہے چار سُو طُوفانِ نوح کا

کشتي کے بادبان کي  ، کِنَاروں کي خير ہو

 

آندھي ہے تُندو تيز چمکتي ہيں بجلياں

گُلشن تيرے سُپرد !بہاروں کي خير ہو

 

مَکرو فريب ہر طرف ،  عادل نہ  عَدل ہے

ايسے ميں نَاز ظُلم کے ماروں کي خير ہو

ءءء

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *