منتخب اشعار

تنگ آ چکے ہیں کشمکش زندگی سے ہم

ٹھکرا نہ دیں جہاں کو کہیں بے دلی سے ہم

۔۔۔

اُجالے اپنی یادوں کے ہمارے ساتھ رہنے دو

نہ جانے کس گلی میں زندگی کی شام ہو جائے

۔۔۔

یوں تو مرنے کے لئے زہر سبھی پیتے ہیں

زندگی تیرے لئے زہر پیا ہے میں نے

۔۔۔

زندگی اک آنسوئوں کا جام تھا

پی گئے کچھ اور کچھ چھلکا گئے

۔۔۔

زندگی کا ہے عناصر میں ظہور ترتیب

موت کیا ہے انہیں اجزا کا پریشاں ہونا

۔۔۔

زندگی شاید اسی کا نام ہے

دوریاں مجبوریاں تنہائیاں

۔۔۔

زندگی تونے مجھے قمر سے کم دے ہے زمیں

پائوں پھیلائوں تو دیوار میں سر لگتا ہے

۔۔۔

زندگی زندہ دلی کا ہے نام

مردہ دل خاک جیا کرتے ہیں

۔۔۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *